لو میرج نے معاشرے کو تباہ کر دیا‘ انجام طلاق ہوتا ہے : ہائیکورٹ

لو میرج نے معاشرے کو تباہ کر دیا‘ انجام طلاق ہوتا ہے : ہائیکورٹ

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس محمد فرخ عرفان خان نے قرار دیا ہے کہ لو میرج نے معاشرے کو تباہی کے دہانے تک پہنچا دیا ہے۔ اس کا انجام لڑائی مار کٹائی اور پھر طلاق پر ہوتا ہے۔ ہم مشرقی روایات کے پاسدار ہیں نہ ہی مغرب کی تقلید کر رہے ہیں۔معاشرہ کھچڑی بن چکا ہے۔ عدالت نے یہ ریمارکس ایک شخص کی طرف سے اسکی بیوی کو جہیز کی واپسی کا مطالبہ کرنے سے روکنے اور ماہانہ اخراجات میں کمی کرنے کروانے کےلئے دائر درخواست کی سماعت کے دوران دیئے۔درخواست گزار زاہد نے عدالت کو بتایا کہ اس نے پاکپتن کی رہائشی زوبیہ سے خفیہ شادی کی بعدازاں گھر والوں نے علم ہونے پر انہیں باضابطہ طور پر رخصت کیا۔ شہری نے عدالت کو بتایا کہ شادی کے بعد دونوں میاں بیوی کے درمیان جھگڑے شروع ہو گئے اور اسکی بیوی نے جہیز کی واپسی اور اپنے ماہانہ اخراجات کی وصولی کے لئے سول عدالت سے رجوع کر لیا۔ شہری نے عدالت سے استدعا کی کہ عدالت اسکی بیوی کو جہیز کی واپسی کا مطالبہ کرنے سے روکنے کا حکم دے اور اسکی بیوی کی جانب سے ماہانہ اخراجات میں کمی کرنے کا بھی حکم دے۔ عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ عدالت ذاتی معاملات میں مداخلت کا کوئی اختیار نہیں رکھتی نہ ہی اس حوالے سے کوئی حکم جاری کر سکتی ہے۔عدالت نے فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا۔
ہائیکورٹ