عمارت غیر قانونی سیل کرنے پر مالکان کے ہاتھوں بلڈنگ انسپکٹر کی دھنائی

لاہور (خبر نگار) داتا گنج بخش ٹائون کے بلڈنگ انسپکٹر کو شاہراہ قائداعظم پر عمارت کو غیر قانونی طورپر سیل کرنے کی سزا مار پیٹ کی شکل میں برداشت کرنا پڑ گئی۔ ذرائع کے مطابق سٹیٹ بینک پاکستان کے بالمقابل ایک قدیم عمارت حیات کے مالکان نے عمارت کو دوبارہ تعمیر کرانے کیلئے نقشہ جمع کروایا تھا۔ نقشہ ابھی تک پاس نہیں ہوا تھا کہ عمارت کے مالکان کے بقول داتا گنج بخش ٹائون بلڈنگ انسپکٹر بلال نے انہیں پیشکش کی کہ 7 لاکھ روپے اسے ادا کر دیں تو عمارت کو بغیرنقشہ منظوری کے تعمیر کر لیں مالکان نے ایسا کرنے سے انکار کیا اور کہا کہ نقشہ منظوری کے بعد ہی عمارت تعمیر کرینگے جس پر بلال نے عمارت کو سربمہر کر دیا مالکان نے عمارت کھول دی کہ بلال نے آکر انہیں دھمکیاں دیں جس پر بلال کی ٹھکائی ہو گئی۔ بعد ازاں پولیس بھی موقع پر پہنچ گئی داتا گنج بخش ٹائون کے ایک افسر بھی موقع پر پہنچ گئے مگر مقدمہ درج نہ ہو سکا مالکان نے البتہ پولیس کو درخواست دیدی ہے ذرائع کے مطابق بلال نے داتا گنج بخش ٹائون میں درجنوں عمارتیں غیر قانونی تعمیر کروائی ہیں جبکہ شاہراہ قائداعظم پر ہی کتابوں وین گارڈ کی جگہ سینکڑوں دکانوں پر مشتمل کثیر المنزلہ پلازہ اس کی نگرانی میں بنایا گیا بتایا جاتا ہے۔