اللہ کے گھر میں دکان بنا کر مجرمانہ فعل کیا: سپریم کورٹ، مسماری کیلئے ایک ماہ کی مہلت

لاہور (وقائع نگار خصوصی) سپریم کورٹ نے کثیرالمنزلہ پلازوں کے خلاف ازخود نوٹس پر گلبرگ کے علاقے میں قائم پلازہ کی عمارت میں غیر قانونی تبدیلیوں کا سخت نوٹس لے لیا اور پلازے کی انتظامیہ کو غیرقانونی دکانوں کی ازخود مسماری کیلئے ایک ماہ کی مہلت دیدی۔ چیف جسٹس ثاقب نثار اور جسٹس عمر عطا بندیال پر مشتمل بنچ نے ازخودنوٹس پر سماعت کی۔ ایل ڈی اے نے پلازہ میں غیر قانونی تعمیر پر رپورٹ پیش کی اور بتایا کہ پلازہ میں مسجد اور باتھ روم کی جگہ کمرشل استعمال کی جا رہی ہے۔ ایل ڈی اے کے مطابق پلازہ میں ایمرجنسی اخراج کو بھی کمرشل استعمال کیا جا رہا ہے۔ پلازہ کے وکیل نے بتایا کہ انتظامیہ نے چھوٹی مسجد کی جگہ بڑی مسجد تعمیر کر دی ہے جس پر دو رکنی بنچ نے ریمارکس دیئے کہ اللہ کے گھر میں دکان بنا کر مجرمانہ فعل کیا۔ فاضل بنچ نے ہدایت کی کہ بہتر ہوگا کہ پلازے کی انتظامیہ خود غیرقانونی دکانوں کو مسمار کر دیں۔ بنچ نے خبردار کیا کہ اگر پلازے کی انتظامیہ نے خود دکانیں مسمار نہ کیں تو ہم حکم دیں گے۔ آئندہ سماعت پر دیگر کثیرالمنزلہ عمارتوں کا معاملہ زیر سماعت آئیگا۔