پنچایت نے اڑھائی سالہ بچی کا 10سالہ لڑکے سے نکاح پڑھوا دیا

دائرہ دین پناہ (نامہ نگار) پنچایت نے ناجائز تعلقات کے شبہ میں اڑھائی سالہ بچی کا 10سالہ لڑکے سے نکاح پڑھوا دیا۔ بیان حلفی تحری رشتہ نہ دینے کی صورت میں 5 لاکھ جرمانہ ادا کرنا ہو گا۔ نواحی موضع پتل شرقی چاہ وزیر والا کے عابد حسین گاڈی کے 13/14سالہ بیٹے ساجد حسین پر 5 اپریل 2015ء کو ناجائز تعلقات کا الزام لگا کر (ش )کے بھائی افضل نے رشتہ داروں کو بلا لیا جنہوں نے ساجد کو تھپڑ مارے بعد ازاں سرپنچ اﷲ بخش نے پنچایت بلا لی جس میں گاڈی‘ کامران‘ افضل‘ خادم حسین‘ فیض بخش‘ مرید حسین اقوام گاڈی وغیر شامل تھے۔ پنچایت نے ساجد حسین کے والد عابد حسین‘ چچا منظور حسین اور حاکم گاڈی کو طلب کر کے اپنا فیصلہ سنایا۔ پنچایت کے فیصلہ کے مطابق تعلقات کے شبہ اور زبردستی دبوچنے پر عابد گاڈی کو اپنی اڑھائی سالہ بچی ثنا بی بی کا رشتہ بشیر گاڈی کے 10سالہ بیٹے محمد شریف سے طے کر دیا۔ چنانچہ نکاح خواں مولوی محمد عبداﷲ نے محمد شریف اور اڑھائی سالہ ثنا بی بی کا شرحی نکاح پڑھایا جس کے بعد باقاعدہ طور پر سٹامپ پیپر پر بیان حلفی تحریر کرایا گیا۔ اڑھائی سالہ بچی ثنا بی بی کے دادا منظور حسین ‘ حاکم حسین نے صحافیوں سے گفتگو کرتے کہا کہ ہمارے بچے ساجد پر ناجائز تعلقات کا الزام سراسر جھوٹ ہے اور پنچایت نے ہمیں اغوا کرنے کی دھمکیاں دیکر زبردستی ہماری اڑھائی سالہ بچی کا شرحی نکاح کر دیا ہے۔ مذہبی‘ سماجی تنظیموں نے پنچایتی فیصلہ کرنے والوں‘ ثالثوں کے خلاف فوری کارروائی کا مطالبہ کیا ہے۔