عدالت بنیادی حقوق کی محافظ، غیر قانونی کاموں کی حمایت نہیں کی جا سکتی: جسٹس جیمز جوزف

عدالت بنیادی حقوق کی محافظ، غیر قانونی کاموں کی حمایت نہیں کی جا سکتی: جسٹس جیمز جوزف

لاہور (وقائع نگار خصوصی)  ہائی کورٹ کے  جسٹس جیمز جوزف نے قرار دیا ہے کہ غیر قانونی کاموں کی حمایت نہیں کی جاسکتی عدالت بنیادی حقوق کی محافظ ہے اگر کسی نے زیادتی کی تو وہ قانون سے نہیں بچ سکے گا  عدالت نے یہ ریمارکس راجہ محمد اعجاز کی اخراج مقدمہ کی درخواست پر آصف ذوالفقار ایس ایچ او لٹن روڈ لاہور کو ذاتی طور پر بمعہ ریکارڈ طلب کرتے ہوئے دیئے۔  اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے  بحث کرتے ہوئے بتایا کہ پاکستان میں کریمنل جسٹس لاء ناکام ہوچکا ہے پولیس کے ذریعے بھتے وصول کرلیں  جھوٹے مقدمات درج کرکے جائیدادوں پر قبضہ کرلیں اور پیسوں کی ریکوریاں کرلیں ہمارے ہاں پولیس گرفتار کرنے سے قبل وجوہات  بتائی ہے۔  اور نہ ہی مجسٹریٹ ریمانڈ دیتے ہوئے اپنا ذہن استعمال کرتے ہیں ہر ریمانڈ کی کاپی سیشن جج کو جاتی ہے مگر وہ بھی کچھ نہیں کرتے ملزم کو وکیل کرنے کا حق نہیں دیاجاتا۔