لاہور میں غیر قانونی تعمیرات کیخلاف ہائیکورٹ میں درخواست دائر، سماعت کل متوقع

لاہور(وقائع نگار خصوصی)  ہائیکورٹ میں اندرونِ شہر غیر قانونی تجارتی عمارتوں کی تعمیر کیخلاف درخواست دائر کر دی گئی۔ حکومتِ پنجاب ، والڈ سٹی اتھارٹی،ایل ڈی ائے،ڈی سی او لاہور ، ضلعی حکومت لاہور وغیرہ کو فریق بناتے ہوئے موقف اختیار کیا گیا  کوچا ہ دھوبیاں اندرون کشمیر ی گیٹ میں امام بارگاہ وقف کے ذریعے چل رہا ہے مگر اِس امام بارگاہ کیساتھ  پلازہ کی تعمیر شروع کر دی  تہہ خانہ کھود کر امام بارگا ہ کو بری طرح نقصان پہنچایا گیا اب ایک پلازہ تعمیر کیا جارہا ہے بارہا درخواست دی مگر کوئی کارروائی نہیں ہوئی ۔ ہائیکورٹ نے والڈ سٹی اتھارٹی کو قانون کیمطابق کاروائی کرنے کا حکم دیا مگر تعمیرات اب تک جاری ہیں۔ حکومتِ پنجاب نے والڈ سٹی اتھارٹی ایکٹ 2012 تشکیل دیا تاکہ پرانے لاہور کی خوبصورتی کو بحال رکھا جائے مگر اندرون شہر میں اِسوقت درجنوں غیر قانونی پلازوں کی تعمیرات جاری ہیں جو کہ ضلعی حکومتوں کے قوانین اور لاہور ڈیویلپمنٹ اتھارٹی کے قوانین کیخلاف ورزی ہے سپریم کورٹ نے واضح طور پر کہا تھا کہ کثیر المنزلہ عمارتوں کی تعمیرات بغیر کسی قواعد کے آئین کیخلاف ورزی ہے۔ عدالت سے استدعا کی گئی ہے کہ امام بارگاہ کیساتھ جاری تعمیرات کو روکا جائے۔ درخواست کی سماعت کل پیر کو متوقع ہے۔