اراضی قبضہ کیس‘ نیب عدالت نے ملک ریاض اور ان کے بیٹے کو بے گناہ قرار دیدیا

اراضی قبضہ کیس‘ نیب عدالت نے ملک ریاض اور ان کے بیٹے کو بے گناہ قرار دیدیا

راولپنڈی (نیوز رپورٹر) نیب عدالت نے بحریہ ٹاون کے سابق چیف ایگزیکٹو ملک ریاض اور ان کے بیٹے علی ریاض کو 1401 کنال اراضی پر قبضہ ریفرنس سے ڈسچارج کر دیا ہے۔ ان کو اس ریفرنس سے ڈسچارج کرنے کیلئے نیب نے ایک درخواست فاضل عدالت میں دائر کی تھی۔ تفصیلات کے مطابق نیب عدالت نمبر 4 میں ملک ریاض اور ان کے بیٹے سمیت 15 ملزمان کے خلاف 1401 کنال اراضی پر قبضہ کے بارے میں ریفرنس زیرسماعت تھا جس پر نیب کی جانب سے 31-B کی درخواست عدالت میں دائر کی گئی جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ ہم نے جو تحقیقات کی ہیں اس کے مطابق ملک ریاض اور علی ریاض بے گناہ ہیں اور یہ کہ ان پر کوئی الزام ثابت نہیں ہوا جس پر فاضل عدالت نے ان کی درخواست منظور کرتے ہوئے انہیں اس ریفرنس سے ڈسچارج کر دیا جبکہ اسی کیس میں ملوث ایک ملزم رضوان پٹواری نے پلی بارگین کے ذریعے 2 کروڑ 30 لاکھ روپے جمع کرا دئیے جس پر فاضل عدالت نے نیب کی درخواست پر اسے بھی اس کیس سے ڈسچارج کر دیا البتہ سیکشن 15 کے تحت اسے نااہل قرار دیدیا ہے کہ وہ نہ تو کسی سرکاری عہدے پر فائز ہو سکتا ہے اور نہ ہی کسی مالیاتی ادارے یا بنک سے لین دین کر سکتا ہے۔ فاضل عدالت سے اس ریفرنس میں دیگر 13 ملزمان پر فرد جرم 14 مارچ کو عائد ہو گی۔