مشرف ۔ ہائے اس زود پشیماں کا ۔۔۔

صحافی  |  ریاض الرحمن ساغر

یہ ندامت کا ”مشرف“ آنسو
نو برس پہلے بہایا ہوتا
آج تیری ہی حکومت ہوتی
اور سیلاب نہ آیا ہوتا
طبل تعمیر سناتا بروقت
صرف طبلہ نہ بجایا ہوتا
داغ ماتھے پہ پشیمانی کا
آج تو نے نہ سجایا ہوتا
آئینہ آج مقابل جو ہے
خود کو پہلے سے دکھایا ہوتا
کوئی ”ایوب“ سے آمر جیسا
جذبہ کار تو پایا ہوتا
سادہ اس قوم نے سر آنکھوں پر
آج تجھکو ہی بٹھایا ہوتا
نہ یہ احساس تاسف ہوتا
نہ یہ الزام اٹھایا ہوتا
حسب آئین الیکشن کوئی
صاف و شفاف دکھایا ہوتا
کاش کرسی نہ بچائی ہوتی
حسن کردار بچایا ہوتا
بیل جمہور کی پھلتی، بڑھتی
سینچ کر اس کو بڑھایا ہوتا
ایک ہی ”کال“ پہ امریکہ کو
اپنے سر پر نہ چڑھایا ہوتا
آج یہ سوچ کے جی کیوں جلتا
کاش اک ڈیم بنایا ہوتا