مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے پر پارلیمنٹ سراپا احتجاج

مقبوضہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے پر پارلیمنٹ سراپا احتجاج

قومی اسمبلی کا50واں سےشن شروع ہو گےا ےہ سےشن 19دسمبر2017ءتک جاری رہے گا قومی اسمبلی کے اجلاس کی اہم بات ےہ ہے امرےکہ کہ اسرائےل نواز پالےسی کی مذمت کی گئی قومی اسمبلی نے امریکہ کی طرف سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارلحکومت تسلیم کرنے اور اپنا سفارت خانہ وہان منتقل کرنے کے فیصلے کے خلاف متفقہ طور پر قرارداد منظور کی قرار داد مےں امریکہ سے یہ فیصلہ فوری طور پر واپس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔ وفاقی وزیر امور کشمیر برجیس طاہر نے قرار داد پیش کی ۔قومی اسمبلی نے جدہ میں اسلامی تعاون تنظیم کے حتمی اعلامیے کی توثیق کر دی قومی اسمبلی کے اجلاس مےں امرےکی فےصلے کی مذمت کر کے قوم کے جذبات کی ترجمانی کی گئی قومی اسمبلی کے ارکان نے امریکی صدر کی طرف سے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارلحکومت تسلیم کرنے کے اعلان کو مسترد کر دےا اور اس بات پر زور دےا کہ پاکستان میں امریکی سفےر کو وزارت خارجہ میں طلب کر کے ا ٓحتجاج رےکارڈ کےا جائے نوید قمر نے کہا کہ ” جس روز امریکہ نے بیت المقدس کو اسرائیل کا دارلحکومت تسلیم کیا وہ ایک تاریک دن ہے۔ یہ اقدام ایک گریٹ گیم کاحصہ ہے“۔ جمعرات کو پارلےمنٹ ہاﺅس کی لابےوں مےں طاہر القادری،آصف علی زرداری اور عمران خان کی دھرنا دےنے کی دھمکےاں موضوع گفتگو بنی رہےں۔ پارلیمانی سیکر ٹری برائے کیڈ مائزہ حمید آئینی اداروں سے لاعلم نکلیں وہ قومی اسمبلی اجلاس میں آئینی اداروں کے نام نہ بتاسکیں تاہم ارکان کی جانب سے آئینی اداروں کی تعریف کرنے پر اصرار کےا تو سپیکر ایاز صادق نے انہےں شرمندگی سے بچا لیا۔ وقفہ سوالات مےں عالیہ کامران کی جانب سے سوال کیا گیا کہ ”آئینی اداروں میں ترقیاتی کام کتنے مکمل ہوئے ہیں “۔جس کے جواب میں وزارت کیڈ نے اپنے تحریری جواب میں ایوان کو آگاہ کیا گےا کہ وزارت پارلیمانی امور، قانون منصوبہ بندی اور داخلہ میں ٹائلیں لگانے کا کام جاری ہے،تحریر ی جواب کو پارلیمانی سیکر ٹری کیڈ مائزہ حمید اسی طرح پڑھ کر سنا دیا ،جس پر سوال پوچھنے والی رکن عالیہ کامران نے کہا کہ میں نے سوال آئینی اداروں کا پوچھا ہے مگر جواب وزارتوں کا دیا جا رہا ہے،پارلیمانی سیکر ٹری آئینی اداروں کی تعریف سنائیں۔جس پر سپیکر ایاز صادق نے کہا کہ آپ سوال پوچھیں تعریفیں نہےں ،جس پر پیپلز پارٹی کی شازیہ مری نے کہا کہ ”ہمار ا سوال ہی یہ ہے کہ آئینی اداروں کی تعریف کیا ہے؟ مگر پارلیمانی سیکر ٹری مائزہ حمید تعریف نہ سنا سکیں ،جس پر سپیکر ایاز صادق نے سوال موخر کر کے پارلےمانی سےکرےٹری کو بچا لےا پیپرا رولز کی خلاف ورزی پر ایف آئی اے کے علاوہ پی آئی اے میں تفتیش کی گئی جس کے بعد متذکرہ ایگزیکٹیو آفیسر کو خلاف ورزیوں کا قصور وار دے کر برطرف کر دیا گیا حتمی تحقیقاتی رپورٹ کا انتظار ہے۔
ڈائری