پنجاب سمیت ملک بھر میں 6 ماہ کے دوران بیرونی سرمایہ کاری 67.3 فیصد کم ہوگئی

پنجاب سمیت ملک بھر میں 6 ماہ کے دوران بیرونی سرمایہ کاری 67.3 فیصد کم ہوگئی

لاہور (کامرس رپورٹر) پنجاب سمیت ملک بھر میں بیرونی سرمایہ کاری میں رواں مالی سال 2014-15ءمیں جولائی سے جنوری کے دوران 67.3 فیصد کمی واقع ہوئی۔ بورڈ آف انوسمنٹ کے اعداد و شمار کے مطابق رواں مالی سال کے پہلے سات ماہ کے دوران ملک میں 54.54 کروڑ ڈالر کی بیرونی سرمایہ کاری ہوئی جو کہ گزشتہ مالی سال کی اتنی مدت کے دوران ایک ارب 66 کروڑ 76 لاکھ ڈالر کی بیرونی سرمایہ کاری کے مقابلے میں ایک ارب 12 کروڑ 22 لاکھ ڈالر کم ہے۔ پنجاب بیرونی سرمایہ کاری کم ہونے سے متاثر ہوا ہے۔ پاکستان بزنس فورم کے صدر ابراہیم قریشی کے مطابق پنجاب بیرونی سرمایہ کاری کے حوالے سے نہایت موزوں ہے لیکن بیوروکریسی بیرونی سرمایہ کاروں کو سہولتیں فراہم کرنے کی بجائے ایسے حالات پیدا کرتی ہے جس کے باعث وہ بددل ہوکر چلے جاتے ہیں۔ جب پنجاب بورڈ آف انوسٹمنٹ اینڈ ٹریڈ بنایا گیا تو طے پایا تھا کہ بیرونی سرمایہ کاروں کو سرمایہ کاری کیلئے ون ونڈو سہولتیں فراہم کی جائیں گی۔ مگر ایسا نہیں ہوا اسکے علاوہ پنجاب میں روڈز کا انفراسٹچر ٹھیک نہیں پنجاب پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ آرڈیننس میں بھی قباحتیں ہیں۔ حکومت اور بیرونی سرمایہ کاروں کے مابین طے پانیوالے معاہدے پر عملدرآمد نہیں ہوتا ان رکاوٹوں کے باعث سرمایہ کاری میں کمی واقع ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ صرف مالی سال 2007-08ءایک ایسا سال تھا جس میں بیرونی سرمایہ کاری کا حجم 8.5 ارب ڈالر تھا۔ اگر حکومت رکاوٹوں کو دور کر لے تو پنجاب سمیت ملک بھر میں بیرونی سرمایہ کاری میں بے انتہا اضافہ ہوگا۔
سرمایہ کاری/ کمی