پی ایس او سے ڈیزل نہ ملنے پر ریلوے نے اوپن مارکیٹ سے خرید لیا

پی ایس او سے ڈیزل نہ ملنے پر ریلوے نے اوپن مارکیٹ سے خرید لیا

لاہور (سٹاف رپورٹر) ریلوے میں ڈیزل کا بحران شدت اختیار کر گیا جس کے باعث ریلوے حکام نے ڈویژنوں کو مقامی مارکیٹ سے ڈیزل خریدنے کی اجازت دے دی ہے۔ ذرائع کے مطابق ریلوے نے پی ایس او کو 1 ارب 11کروڑ 20لاکھ روپے واجبات ادا کرنے ہیں۔ 14ملین کا چیک کیش ہو گیا مگر ریلوے نے مزید ڈیزل نہیں دیا اور ریلوے انتظامیہ کو ہدایت کی کہ وہ پہلے مزید رقم دیں پھر ڈیزل دیا جائے گا جس پر ریلوے انتظامیہ نے ٹرین آپریشن جاری رکھنے کے لئے تمام ڈویژنل دفاتر کو اوپن مارکیٹ سے ڈیزل خریدنے کی اجازت دے دی جس کے بعد ریلوے لاہور ڈویژن نے گذشتہ روز مارکیٹ سے 1لاکھ لٹر ڈیزل خرید لیا۔ ذرائع نے بتایا کہ کراچی ڈویژن نے 47ہزار لیٹر ڈیزل اورملتان ڈویژن نے 20ہزار لیٹر ڈیزل مقامی مارکیٹ سے خریدا۔ کوئٹہ اور روہڑی میں 3دن کا ڈیزل سٹاک رہ گیا جبکہ راولپنڈی اور کندیہ میں ایک دن کا ڈیزل سٹاک ہے۔ دریں اثناءسانحہ کوئٹہ کے نتیجہ میں مسلسل دو روز تعطل کے بعد گزشتہ روز لاہور سے کراچی اور دیگر شہروں کے لئے ٹرین آپریشن جزوی طور پر شروع ہو گیا تاہم انجنوں اور ریک نہ ہونے کے باعث کراچی ایکسپریس، بزنس ایکسپریس، نائٹ کوچ، شالیمار ایکسپریس، قراقرم ایکسپریس نہ جا سکیں جس کی وجہ سے مسافر خوار ہو گئے۔ دوسری طرف سے کراچی سے بھی ٹرین آپریشن شروع ہو گیا۔