امن و امان کی مخدوش صورتحال، ملک میں اقتصادی سرگرمیاں ماند پڑ گئیں

اسلام آباد (آئی این پی) ملک میں امن و امان کی مخدوش سیاسی صورتحال کی وجہ سے کاروباری سرگرمیاں ماند پڑ گئیں۔ امن و امان کی خراب صورتحال کے باعث گزشتہ ہفتے ملکی اور غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رقوم بیرون ملک منتقل کرنے کا رحجان برقرار رہا ہے جبکہ ان حالات کی وجہ سے سرمایہ کاروں کے مختلف شعبوں میں کروڑوں روپے ڈوب گئے۔ ایک رپورٹ کے مطابق مالی سال 2008-09ء کے دوران پاکستان میں 2 ارب 66 کروڑ 85 لاکھ ڈالر کی غیر سرمایہ کاری کی گئی ہے۔ جو مالی سال دو ہزار سات آٹھ کے دوران کی گئی پانچ ارب پینتالیس کروڑ ڈالر کی سرمایہ کاری سے اکیاون فیصد کم ہے۔ سٹیٹ بنک کے اعداد و شمار کے مطابق مالی سال دو ہزار سات آٹھ کے مقابلے میں مالی سال دو ہزار آٹھ نو کے دوران براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری 31.2 فیصد کمی سے تین ارب 72 کروڑ 18 لاکھ ڈالر رہی۔ اس دوران نجی سرمایہ کاری میں ایک ارب پانچ کروڑ 33 لاکھ ڈالر کی کمی ریکارڈ کی گئی اس طرح گزشتہ مالی سال کے دوران مجموعی غیر ملکی سرمایہ کاری کی مالیت دو ارب چھیاسٹھ کروڑ پچاسی لاکھ ڈالر رہی جبکہ کراچی سٹاک ایکسچینج میں کاروباری ہفتہ کے دوران دوسرے روز کاروباری سرگرمیاں توقع کے برعکس شدید اتار چڑھائو کا شکار رہیں۔ کاروبار کے مثبت آغاز پر شیئر مارکیٹ میں مسلسل تیزی کا عمل برقرار رہنے کی امید ظاہر کی جا رہی تھی تاہم بینکنگ و انرجی سیکٹر میں سرمایہ کاروں کی جانب سے منافع کے حصول کیلئے شیئرز کی فروخت کے دبائو نے مارکیٹ کو منفی زون میں داخل کر دیا۔