”محنت کشوں کی طبی سہولیات پر 4 ارب31کروڑ خرچ کئے جا رہے ہیں“

 لاہور (پ ر) وزیر محنت پنجاب حاجی احسان الدین قریشی نے کہا کہ محنت کشوں کو علاج معالجہ کی بہتر سہولیات کی فراہمی پر موجودہ مالی سال کے دوران 4 ارب31کروڑ روپے خرچ کئے جائیں گے ۔انہوں نے کہا کہ سوشل سیکیورٹی ہسپتالوں میں ادویات کے معیار ، ڈاکٹرز کی حاضری اور دیگر سہولیات کی باقاعدگی سے فراہمی کو یقینی بنانے کے لئے وہ خود اور متعلقہ حکام چیکنگ کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ شیخو پورہ میں مزدوروں کے لئے ایک نیا سوشل سیکورٹی ہسپتال قائم کیا جائے گا اور سوشل سکیورٹی ہسپتالوں میں ہسپتال مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم کا نفاذ کیا جائے گا، اس سے صنعتی کارکنان اور ان کے اہل خانہ کے علاج معالجہ کے متعلق تمام کوائف کمپیوٹرائزڈ کر دیئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ورکرز ویلفیئر بورڈ کے 9 سکولوں میں میٹرک ٹیک پروگرام شروع کر دیا گیا ہے جبکہ دیگر اضلاع میں ووکیشنل ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ قائم کئے جائیں گے جس کے لئے ٹیوٹا بھرپورتعاون فراہم کرے گا - انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے محنت کشوں کی پنشن و اولڈ ایج بینیفٹ، تعلیم و شادی گرانٹ میں اضافہ کرنے کے ساتھ ساتھ کم از کم اجرت9ہزار روپے ماہانہ مقرر کی ہے جس کی ادائیگی کو یقینی بنا یا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ صوبہ کے49 ورکرز ویلفیئر سکولوں میں مزدوروں کے28 ہزار بچوں کو مفت تعلیمی سہولیات کی فراہمی کے ساتھ ساتھ انہیں کتابیں، سٹیشنری، ٹرانسپورٹ اور یونیفارم بھی مفت مہیا کی جا رہی ہیں۔