وفاقی کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے ملکی ضروریات کے پیش نظر بیس لاکھ ٹن گندم برآمد کرنے کا فیصلہ منسوخ کردیا ہے جبکہ سیلاب سے متاثرہ کسانوں کیلئے پیکج کی منظوری دیدی ہے

وفاقی کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے ملکی ضروریات کے پیش نظر بیس لاکھ ٹن گندم برآمد کرنے کا فیصلہ منسوخ کردیا ہے جبکہ سیلاب سے متاثرہ کسانوں کیلئے پیکج کی منظوری دیدی ہے

اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس اسلام آباد میں وزیرخزانہ ڈاکٹرعبدالحفیظ شیخ کی زیر صدارت ہوا۔ بعد میں وفاقی سیکرٹری خزانہ سلمان صدیق نے ای سی سی کے اجلاس میں کیئے گئے فیصلوں کے بارے میں میڈیا کو بریفنگ دی۔ انہوں نے بتایا کہ گندم کی امدادی قیمت کے تعین کے لئے وفاقی وزیر سید نوید قمر کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی گئی ہے جو ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کرے گی،
ای سی سی نے سیلاب سے تباہ ہونے والی فصلوں کا معاوضہ ادا کرنے کی منظوری بھی دی ۔ کمیٹی کے فیصلوں کے مطابق پچیس ایکڑ تک زمین رکھنے والے کسانوں کو چوبیس سو روپے فی ایکٹر معاوضہ ادا کیا جائے گا جبکہ پچیس ایکڑ سے زائد زمین کے ملکان کو آٹھ فیصد شرح منافع پر قرض دیئے جایئں گے۔   اجلاس میں جسٹس ریٹائرڈ رانا بھگوان داس رپورٹ کے مطابق پیٹرولیم پرائسز کے نئے فارمولے کی اصولی منظوری بھی دی گئی ہے جبکہ اس کی حتمی منظوری وفاقی کابینہ دے گی ۔