منشیات سے انکار

برسلز :عظیم ڈار....
چرچز سائینٹولوجی فار یورپ نے گزشتہ دنوں منشیات کے نقصانات کے بارے میں شہریوں میں آگہی کیلئے ’’ منشیات سے انکار‘‘ کے نام سے ایک لیکچر کا اہتمام کیا۔منشیات سے بچاؤ کی مہم کی سلسلے میں اس لیکچر کے دوران لوگوں کو منشیات کے عادی لوگوں کی داستان پر مشتمل دستاویزی فلم دکھائی گئی۔ اس مہم کی کو آرڈینیٹر کرسٹل فیسے نے بتایا کہ بیلجیئم میں ہر تیسرا نوجوان منشیات کا عادی ہے ۔ اس موقع پر مقررین نے واضع کیا کہ لوگوں کو اس عادت کے نقصانات کے بارے میں آگاہ کرنے لیکئے ضروری ہے کہ سکولوں میں آگاہی مہم چلائی جائے۔ افریقہ میں نیشنل اسوسی ایشن فار یوتھ کی ایک خاتون رکن نے بعض جگہوں کی نشاندہی کی جہاں لوگوں میں شعور اجاگر کرکے انہیں اس لعنت سے نجات دلائی جاسکتی ہے۔ ایک اور رکن نے بتایا کہ منشیات کا کاروبار کئی دیگر جرائم کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔لیکچر میں شریک نوجوانوں نے اس موقع پر افسوس کا اظہار کیا کہ انہیں اس لعنت کے بارے میں واقعی کوئی آگہی نہیں تھی ‘ انہوںنے درخواست کی ہے کہ منشیات کی روک تھام کیلئے سکولوں ‘ گھروں اور یوتھ سینٹرز میں اسکے نقصانات کے متعلق آگہی فراہم کی جائے۔ کسٹل فیسے نے واضع کیا کہ بیلجیئم کو منشایات سے پاک کرنے کیلئے اس مہم کو مزید توسیع دی جائے گی اور اس سلسلے میں لیکچر کا سلسلہ بھی جاری رہے گا۔