بھارت میں پاکستانیوں کی تلاشی اور تفتیش پر حکومت بے بس ہے : وزیر مملکت امور خارجہ

اسلام آباد (لیڈی رپورٹر + سٹاف رپورٹر + ایجنسیاں) قومی اسمبلی میں وزیر مملکت برائے امور خارجہ ملک عماد نے کہا ہے کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان جامع مذاکرات میں تعطل بھارت کی وجہ سے پیدا ہوا۔ مذاکرات منقطع ہونے کے فوائد صرف دہشت گردوں کو ہو رہے ہیں‘ بھارت جانے والے پاکستانیوں کی مختلف مقامات پر تلاشی لی جاتی ہے اور تفتیش کی جاتی ہے کہ وہ کس مقصد سے آئے‘ یہ ان کا اندرونی معاملہ ہے‘ اس صورتحال میں پاکستانی حکومت بے بس ہے۔ مسلم لیگ (ن) نے نکتہ اعتراض پر کہا کہ وزارت اطلاعات اخباری مضامین کے ذریعے نوازشریف کی کردار کشی کر رہی ہے جو میثاق جمہوریت کی خلاف ورزی ہے‘ وزیر صحت نے کہا ہے کہ ملکی ایئرپورٹس پر آنے والے غیر ملکی افراد کے ایڈز ٹیسٹ کی کوئی تجویز زیر غور نہیں‘ ایسا قدم اٹھایا گیا تو بین الاقوامی سطح پر کافی واویلا ہو گا۔ تحریری بیان میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے قومی اسمبلی کو بتایا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان جامع مذاکرات کے عمل میں نمایاں پیشرفت ہوئی ہے۔ تاہم انہوں نے واضح کیا کہ بھارت نے پاکستان کے ساتھ جامع مذاکرات کے عمل میں کچھ تعطل پیدا کیا تھا۔ وقفہ سوالات کے دوران وزیر مملکت خارجہ امور ملک عماد احمد نے کہا کہ پاکستان بھارت سے مذاکرات کی بحالی کے لئے تیار ہے۔ بیرون ممالک کل 14 غیر پیشہ ور سفیر ہیں جن میں سے سات کی تقرری موجودہ حکومت نے کی۔ ترکی میں 85 اور چین میں 91 پاکستانی شہری مختلف الزامات کے تحت جیلوں میں سزائیں کاٹ رہے ہیں۔ وزیر صحت اعجاز جاکھرانی نے ایک سوال پر کہا کہ ملک میں دو سالوں کے دوران ایڈز کے رجسٹرڈ کیسوں کی تعداد 643 ہے۔ موجودہ حکومت نئی ہیلتھ پالیسی مارچ کے آخر تک متعارف کرا دے گی جبکہ وزیر سماجی بہبود ثمینہ خالد گھرکی نے بتایا کہ چائلڈ لیبر کی روک تھام کے لئے چائلڈ پروٹیکشن بل بہت جلد ایوان میں لایا جائے گا۔ جاکھرانی نے ایوان کو بتایا کہ لاہور میں وفاقی حکومت کا کوئی ہسپتال نہیں ہے البتہ ڈسپنسریاں ضرور ہیں تاہم شیخ زاید ہسپتال کو وفاقی حکومت کی تحویل میں لینے کے لئے پنجاب حکومت سے بات چل رہی ہے۔ وفاقی دارالحکومت کے ہسپتالوں سے 26 لاکھ کی ادویات چوری ہوئیں جو پشاور لے جا کر بیچ دی گئیں‘ ملوث ملازمین کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔ ایوان کو بتایا گیا کہ افغان حکومت نے چترال اور پشاور کے درمیان ارندو خیبر راستہ کھولنے کی منظوری دے دی ہے۔ فاٹا کے پارلیمانی لیڈر منیر اورکزئی نے نکتہ اعتراض پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ فاٹا کے عوام پر ایک طرف ڈرون حملے کرتے ہیں تو دوسری طرف سکیورٹی ادارے انہیں مار رہے ہیں۔ کرم ایجنسی سے بے دخل لوگوں کو آباد نہ کیا گیا تو حالات مزید خراب ہو سکتے ہیں۔ احسن اقبال نے نکتہ اعتراض پر کہا کہ اپوزیشن رہنمائوں کی کردار کشی کی جا رہی ہے‘ سلسلہ جاری رہا تو 80ء اور 90ء کی دہائی کی سیاست میں واپس چلے جائیں گے۔ اس پر بابر اعوان نے کہا کہ حکومت اور اتحادی جماعتیں اپوزیشن کا احترام کرتی ہیں۔ معاملے کا نوٹس لیں گے۔ اجلاس کے دوران وفاقی وزراء کی اکثریت اجلاس سے غائب رہی جبکہ حکومتی اور اپوزیشن اراکین نے وزراء کی عدم موجودگی پر سخت برہمی کا اظہار کیا جس پر سپیکر نے پیپلز پارٹی کے چیف وہیپ سید خورشید شاہ کو ہدایت کی کہ وہ وزراء کی وقفہ سوالات کے دوران حاضری کو یقینی بنایا جائے اور اراکین کی شکایات دور کی جائیں۔ ڈاکٹر مہرین رزاق بھٹو اور ڈاکٹر ظل ہما کو پاکستان نرسنگ کونسل کا رکن اور ڈاکٹر عذرا افضل کو پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل کی رکن نامزد کرنے کی ایوان نے منظوری دے دی۔ ماروی میمن نے کہا کہ وہ کشمیر پر ایک قرارداد لانا چاہتی ہیں جس میں اوبامہ انتظامیہ سے مطالبہ کیا جائیگا کہ وہ کشمیر بارے اپنے نمائندے کو اقوام متحدہ کی کشمیر پر قراردادوں کی پاسداری اور عمل درآمد پر مجبور کریں۔ ملک عماد نے وضاحت کی کہ خارجہ پالیسی کے اہم ایشوز پر حکومت اور اپوزیشن کا موقف ایک ہے بعض اوقات لفظوں کا ہیر پھیر ہو سکتا ہے۔ حنیف عباسی نے کہا کہ لاپتہ افراد کے لواحقین سڑکوں پر احتجاج کر رہے ہیں ان کی دادرسی کی جائے۔ سینٹ میں رضا ربانی نے بیان دیا ہے کہ ڈرونز حملے نہیں روک سکتے کچھ مجبوریاں ہیں ایوان کو ان مجبوریوں سے آگاہ کیا جائے اگر حملے نہیں رک سکتے تو پارلیمنٹ کا کیا فائدہ۔ وزیر مواصلات ارباب عالمگیر نے کہا کہ لواری ٹنل ستمبر 2010ء میں ٹریفک کیلئے کھول دی جائے گی۔ وزیر زکوٰۃ و عشر مولانا نورالحق قادری نے اعتراف کیا ہے کہ صوبہ سرحد میں زکوٰۃ کے ضلعی چیئرمینوں کی تقرری سیاسی بنیادوں پر ہوئی ہے۔ ڈاکٹر فہمید مرزا نے وزارت و خوراک و زراعت کو ہدایت کی ہے کہ زرعی تحقیق کے اداروں کی کارکردگی بہتر بنانے کے لئے خصوص اقدامات کئے جائیں۔