راولپنڈی: ہسپتال میں ایک نومولود کو بلی نے مار ڈالا، دوسرے کو چوہے نے نوچ لیا


راولپنڈی (نیوز رپورٹر) ہولی فیملی ہسپتال انتظامیہ کی غفلت نے ایک ماہ کی گود اجاڑ دی‘ جڑواں بچوں میں سے ایک کو بلی نے مار ڈالا۔ دوسرا معصوم چوہوں نے بھنبھوڑ ڈالا‘ والدین پر غشی کے دورے پڑ رہے ہیں، انتظامیہ نے واقعہ چھپانے کے لئے متاثرہ فیملی کو ڈرایا دھمکایا مگر رشتہ داروں کی آہ و بکا نے بھانڈا پھوڑ دیا۔ بتایا گیا ہے کہ سرائے خربوزہ ٹیکسلا کا رہائشی توصیر احمد اپنی اہلیہ راحیلہ بی بی کو لیکر ہولی فیملی ہسپتال آیا جہاں اس نے دو بچوں کو جنم دیا۔ ان نوزائیدہ بھائیوں کو زچہ بچہ وارڈ کے سٹاف نے بے بی وارڈ میں رکھ دیا جہاں موجود خونخوار بلی نے ایک بچے کی انگلی چبا ڈالی جس سے وہ جاںبحق ہو گیا، دوسرے معصوم کا منہ اور ہونٹ چوہوں نے کتر لئے جس سے وہ بری طرح زخمی ہو گیا اور اب تک اس کی حالت غیر ہے۔ ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ زندہ رہ جانے والے بچے کی سرجری کی جائے گی۔ اس واقعہ کے بارے میں جب ایم ایس سے رابطہ کیا گیا تو اس نے لاعلمی کا اظہار کیا۔ بعد میں کہا کہ تحقیقات کر رہے ہیں۔ بعض مریضوں کا کہنا تھا کہ ہر طرف گندگی کے ڈھیروں کے باعث بلیاں، چوہے حتیٰ کہ کتے بھی وارڈوں میں آزادانہ گھوم رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق واقعہ کی تحقیقات کے لئے انکوائری کمیٹی قائم کر دی گئی۔ ایک اور ذریعہ کے مطابق پیدائش کے بعد لیبر روم کے عملہ نے زچہ کو وارڈ میں منتقل کر دیا جبکہ نومولود کو لیبر روم کے باہر ٹیبل پر رکھ دیا۔ بتایا جاتا ہے کہ اسی دوران ایک پشتون خاتون کے ہاں مردہ بچے نے جنم لیا، عملہ نے اس مردہ بچے کو بھی نومولود کے ساتھ ٹیبل پر رکھ دیا اور اپنے دیگر معاملات میں مصروف ہو گیا۔ لواحقین نے شور مچایا جس پر لیبر روم کا عملہ جب بچے کو دیکھنے گیا تو وہاں افسوس ناک صورتحال دیکھنے کو ملی، نومولود بچہ چیخ رہا تھا اور اس پر ایک موٹا چوہا چہرے کے بائیں جانب سے کاٹ رہا تھا جبکہ دیگر چوہے ساتھ مردہ بچے کو نوچ رہے تھے، مذکورہ صورت حال دیکھنے والی نرس کی چیخ نکل گئی۔