اسلام آباد ہائیکورٹ کے ججز انوارالحق قریشی، شوکت عزیز صدیقی نے چارج چھوڑ دیا


اسلام آباد (وقائع نگار+ نوائے وقت رپورٹ) اسلام آباد ہائیکورٹ کے دو ججز جسٹس نورالحق قریشی، جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے وزارت قانون کی جانب سے تقرری کا نوٹیفکیشن جاری نہ ہونے کے باعث اپنے عہدوں کا چارج چھوڑ دیا ہے۔ رجسٹرار اسلام آباد ہائی کورٹ نے اپنے مراسلہ میں مذکورہ دونوں جج صاحبان کو سابق جسٹس مخاطب کرتے ہوئے انہیں ہدایت کی ہے کہ وہ ایسے تمام مقدمات کی فائلیں رجسٹرار آفس کو واپس کریں جن کی سماعت انہوں نے 20 نومبر تک کی ہے اور ان کے فیصلے جاری نہیں کئے ہیں یا ایسے مقدمات جن کے فیصلہ جات پر ان دونوں جج صاحبان کے دستخط ہونا تھے رجسٹرار آفس کے مراسلے میں کہا گیا ہے کہ 20 نومبر کو چونکہ ان جج صاحبان کی مدت ملازمت ختم ہو چکی ہے لہٰذا اس تاریخ کے بعد ان کے دستخطوں سے کوئی بھی مختصر یا تفصیلی فیصلہ جاری نہیں ہو سکتا۔ واضح رہے گزشتہ ماہ منعقد ہونے والے جوڈیشل کمشن کے اجلاس میں جسٹس شوکت عزیز صدیقی اور جسٹس کو مستقل جب کہ جسٹس نورالحق قریشی کی مدت ملازمت میں چھ ماہ کی توسیع کی سفارش کی گئی تھی علاوہ ازیں کمشن نے چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ جسٹس اقبال حمید الرحمان کو سپریم کورٹ کا جج اور ان کی جگہ جسٹس انور کاسی کو چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ بنانے کی سفارش کی تھی ججز پارلیمانی کمیٹی نے جوڈیشل کمشن کی سفارشات کی منظوری دے دی تھی تاہم وزارت قانون نے 20 نومبر تک ان سفارشات کی روشنی میں نوٹیفکیشن جاری نہیں کیا۔



دیگر خبریں

پرنٹ لا ئن

پرنٹ لا ئن

17 دسمبر 2017
پرنٹ لائن

پرنٹ لائن

16 دسمبر 2017
پرنٹ لائن

پرنٹ لائن

15 دسمبر 2017
پرنٹ لائن

پرنٹ لائن

14 دسمبر 2017