لوڈشیڈنگ کا بحران شدید ہو گیا‘ لاہور سمیت کئی شہروں میں مظاہرے جاری‘ گرمی سے 5 افراد جاں بحق

لاہور + سرگودھا + نارنگ (نیوز رپورٹر + نامہ نگاران+ نامہ نگار خصوصی) بجلی کا بحران شدت اختیار کر گیا جس پر لاہور‘ شیخوپورہ، فیروز والا سمیت کئی شہروں میں مظاہرے کئے گئے اور ریلیاں نکالی گئیں 20 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ سے کاروباری سرگرمیاں ماند پڑ گئیں۔ شدید گرمی سے لاہور شیخوپورہ‘ نارنگ میں 5 افراد جاں بحق ہوگئے جبکہ درجنوں افراد بیہوش ہو گئے‘ گیسٹرو کے باعث ہسپتال مریضوں سے بھر گئے۔ تفصیلات کے مطابق پیپکو نے شہروں اور دیہات میں 21 گھنٹے کیلئے بجلی کی لوڈشیڈنگ کے دورانیے کو معمول بنا لیا ہے۔ جس کی وجہ سے کاروباری اور عام معمولات زندگی میں شدید خلل پڑ گیا ہے ۔ بجلی کے نظام میں خسارہ پھر 3800 میگاواٹ ہو گیا ہے۔ لاہور میں باگڑیاں، جلوموڑ، گلدشت ٹائون، بند روڈ اور چوہنگ ، مال روڈ‘ انارکلی اور اعظم کلاتھ مارکیٹ کے تاجروں نے پیپکو کے خلاف مظاہرے کئے۔ انارکلی اور اعظم کلاتھ مارکیٹ کے تاجروں نے ریلی بھی نکالی۔ لاہور کے مختلف سرکاری ہسپتالوں میں گذشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران گیسٹرو سے متاثرہ سات سو 67 مریض لائے گئے ہیں۔ ان مریضوں میں پانچ سال سے کم عمر کے تین سو بیاسی بچے شامل ہیں۔ پاکستان میں 35 ہزار افراد گیسٹرو کا شکار ہوئے۔ راوی روڈ کی 45 سالہ عظمت بی بی اور شیراکوٹ کا 30 سالہ عنایت گرمی کی شدت کے باعث دل کا دورہ پڑنے سے گر گیا اور 7 افراد بے ہوش ہوگئے۔فیروزوالا سے نامہ نگار کے مطابق شدت کی گرمی کی وجہ سے فیکٹری کے چھ محنت کشوں سمیت دس افراد بے ہوش ہوگئے۔ بجلی کی بندش پر شہریوں نے واپڈا دفاتر کے باہر احتجاج کیا اور زبردست نعرہ بازی کی۔ نارنگ منڈی سے نامہ نگار کے مطابق گرمی اور لوڈ شیڈنگ نے عوام کو بے حال کر دیا ہے۔ خاتون سکینہ بی بی ہلاک اور متعدد بے ہوش ہوگئے۔ حافظ آباد سے نمائندہ نوائے وقت کے مطابق لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ 16 گھنٹوں سے تجاوز کر گیا جس سے شہری سراپا احتجاج اور کاروبار زندگی مکمل طور پر ٹھپ ہو کر رہ گیا۔ پاور لومز فیکٹریاں بند ہونے سے ہزاروں مزدور بے روزگار ہو کر اپنی دیہاڑیوں کو ترستے رہے۔ شیخوپورہ سے نامہ نگار خصوصی کے مطابق شدید گرمی سے 2 خواتین جاں بحق اور 18 افراد کے بے ہوش ہونے کی اطلاعات ملی ہیں غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ میں مزید اضافہ کے خلاف شہریوں نے مین بازار، غلہ منڈی نیو ٹمبر مارکیٹ لاہور روڈ اور طارق روڈ پر احتجاجی مظاہرے کئے۔ مرید کے سے نامہ نگار کے مطابق مرید کے اور اس کے گردو نواح میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ بیس گھنٹے سے بھی تجاوز کر گیا۔ سخت گرمی کے موسم میں بجلی اور پانی سے محروم ہوگئے۔ کراچی میں بارش کے باعث شہر کو بجلی فراہم کرنے والے 39 فیڈر ٹرپ کر گئے جس سے لوگوں کو کافی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔