ہائیکورٹ: مسلم لیگ ن، پی پی، جے یو آئی ف کے انٹرا پارٹی الیکشن کا ریکارڈ طلب

لاہور (اپنے نامہ نگار سے) لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس سید منصور علی شاہ نے تین بڑی سیاسی جماعتوں، مسلم لیگ ن، پیپلزپارٹی، جے یو آئی ف میں انٹرا پارٹی انتخابات نہ کرانے کے خلاف دائر درخواست یکم جولائی تک ملتوی کر دی۔ عدالت نے الیکشن کمشن کو تینوں سیاسی جماعتوں میں کرائے گئے انٹرا پارٹی انتخابات سے متعلق تمام ریکارڈ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔ درخواست گزار گوہر نواز سندھو نے موقف اختیار کیا کہ تینوں بڑی سیاسی جماعتوں نے پارٹیوں میں انتخابات نہیں کرائے جو انکے جماعتی منشور کی سنگین خلاف ورزی ہے لٰہذا انٹرا پارٹی انتخابات نہ کرانے تک عدالت ان سیاسی جماعتوں کو کام سے روکنے کے احکامات دے۔ الیکشن کمشن کے نمائندے نے عدالت کو بتایا کہ تینوں سیاسی جماعتوں نے انٹرا پارٹی انتخابات کرانے کے بعد قانون کے مطابق سرٹیفکیٹ الیکشن کمشن میں جمع کرا دیا ہے۔ درخواست گزار نے سرٹیفکیٹ پر اعتراض عائد کرتے ہوئے کہا کہ سرٹیفکیٹ کے ساتھ جماعتی انتخابات کی تفصیلات ریکارڈ پر لانا قانونی تقاضا ہے، ریکارڈ کے بغیر سرٹیفکیٹ کی کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے۔ عدالت نے کہا کہ کسی قانون کی عدم موجودگی اور عدم شہادت کی بناء پر ان سرٹیفکیٹس کو کالعدم قرار نہیں دے سکتے۔