خیبر پی کے میں 25 ہزار میگا واٹ بجلی پیدا کی جا سکتی ہے‘ وفاق تعاون کرے: سراج الحق

پشاور (این این آئی) خیبر پی کے، کے وزیرخزانہ سراج الحق نے کہا ہے کہ صوبے میں پچیس ہزار میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت موجود ہے۔ وفاقی حکومت کالا باغ ڈیم پر وقت ضائع کرنے کی بجائے صوبائی حکومت کی مالی معاونت کرے۔ اتوار کے روز خیبر پی کے اسمبلی کا اجلاس حسب معمول ایک گھنٹہ تاخیر سے سپیکر اسد قیصر کی زیرصدارت شروع ہوا۔ بجٹ پر بحث کو سمیٹتے ہوئے صوبائی وزیر خزانہ سراج الحق نے دعویٰ کیا کہ صوبے میں مختلف منصوبوں سے 25000 میگاواٹ بجلی سسٹم میں شامل کی جاسکتی ہے جس پر 38 ارب روپے کے اخراجات آتے ہیں۔ مرکزی حکومت کالا باغ ڈیم پر وقت ضائع کرنے کی بجائے بجلی بحران کے خاتمے کے لئے خیبر پی کے حکومت کی مالی مدد کرے۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ صوبہ پہلے سے 132 ارب روپے مقروض ہے۔وفاق کی جانب سے 84 ارب روپے دینے کا جو اعلان کیا گیا ہے اس پر عمل ہوا تو معاشی بوجھ کم ہوجائیگا۔ وزیر خزانہ نے تمام اراکین کو یقین دلایا کہ بجٹ کے حوالے سے انکی تجاویز کو مد نظر رکھتے ہوئے تمام اضلاع کی محرومیوں اور مسائل کا خاتمہ یقینی بنایا جائیگا۔ وزیر خزانہ سراج الحق نے کہاہے کہ وفاق صوبے کی جو رائلٹی دیتاہے ‘ وہ ہمارا حق ہے ‘ ہم نے ٹیکس فری بجٹ پیش کیاہے‘ اور غیر ترقیاتی اخراجات کو پندرہ فیصد اور وزیراعلیٰ وگورنر ہاﺅس کے غیر ترقیاتی اخراجات پچاس فیصد کم کئے ہیں‘ بجٹ میں 983منصوبے ہیں‘ جن میں اس وقت 609منصوبے گزشتہ حکومتوں کے منصوبے ہیں۔ وزیرخزانہ نے کہاکہ صوبہ کے تمام اضلاع کے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتالوں میں ایمرجنسی کو مفت کردیاگیاہے‘صوبہ بجلی کی پیداوار کا ایک بڑا ذریعہ ہے وفاق کالاباغ ڈیم اور بھاشا ڈیم کے پیچھے نہ پڑے‘ وفاق تعاون کرے ہم پچیس سو میگاواٹ بجلی پیدا کرکے دے سکتے ہیں۔ خیبر پی کے اسمبلی کے ارکان نے گلگت بلتستان میں غیر ملکی سیاحوں کو دہشت گرد حملے میں قتل کرنے کی شدید مذمت کی ہے۔ نگہت اورکزئی کی جانب گلگت بلتستان واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا گیا کہ مذمتی قرار داد پیش کی جائے جس کے جواب میںوزیر قانون اسراراللہ گنڈا پور نے کہاکہ انسان ہونے کے ناطے ہم اس واقعہ کی مذمت کرتے ہیں لیکن قرار داد پیش کرنا بزنس رول کے خلاف ہے ایوان کی کارروائی کے بعد اس قرار داد پر بات ہو گی۔ بجٹ اجلاس کے دوران جماعت اسلامی کے ایم پی اے کی جانب سے خواتین ایم پی اےز کو نظر انداز کرنے کیخلاف پیپلز پارٹی کی واحد خاتون ایم پی اے نے احتجاجاً ایوان سے واک آﺅٹ کیا جس کے بعد سینئر وزیر سکند شیر پاﺅ ان کو منا کر اسمبلی میں لائے خیبر پی کے سمبلی کا اجلاس آج 4بجے تک ملتوی کر دیا گیا۔