ماشکیل میں زلزلہ متاثرین امداد سے محروم، سرکاری دفاتر کے باہر مظاہرے

ماشکیل (اے ایف پی) بلوچستان میں شدید زلزلہ کے متاثرین نے امدادنہ ملنے پر یہاں سرکاری دفاتر کے باہر مظاہرہ کیا۔ مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ حکومت انہیں مزید ہنگامی امداد فراہم کرے وہ گزشتہ چار روز سے کھلے آسمان تلے پڑے ہیں۔ منگل کو 7.8 شدت کے آنے والے زلزلے سے ماشکیل کا علاقہ بری طرح متاثر ہوا ہے، مکانات گرنے سے ہزاروں افراد بے گھر ہو گئے ہیں جمعہ کو یہاں سرکاری دفاتر کے باہر دو مظاہرے کئے گئے مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ انہیں سر چھپانے کیلئے خیمے فراہم کئے جائیں اور بجلی بحال کی جائے مقامی افراد نے بتایا کہ کہیں فوری طور پر شیلڈ کی ضرورت ہے ہم کب تک کھلے آسمان تلے زندگی گزاریں گے، انہوں نے کہا کہ سرکاری حکام نے ہماری کوئی مدد نہیں کی اگر یہ لوگ ہماری مدد نہیں کر سکتے تو ایران کو ہماری مدد کرنے کی اجازت دی جائے۔ ادھر مشکیل انتظامیہ کے عہدیدار سید مرید شاہ نے بتایا کہ زلزلے سے 35 ہزار سے زائد افراد متاثر ہوئے ہیں علاقے میں ہزاروں مکانات تباہ ہو گئے ہمارے پاس ضرورت کے مطابق امدادی سامان موجود نہیں امدادی سامان لانے والے ٹرک راستے بند ہونے کے باعث متاثرہ علاقے میں پہنچ نہیں پا رہے تاہم سڑک صاف کرنے کیلئے عملہ اور مشینری بھیج دی گئی ہے ہمارے پاس صرف تین سو خیمے ہیں جو اس لئے تقسیم نہیں کئے گئے کہ ان سے محروم رہ جانے والے متاثرین میں بے چینی پھیلنے سے مسائل پیدا ہوں گے۔
زلزلہ متاثرین