بجلی کے بحران میں شدت‘ لاہور میں مسلسل چار سے چھ گھنٹے کی لوڈشیڈنگ احتجاجی مظاہرے

لاہور (نیوز رپورٹر+ نوائے وقت رپورٹ+ نمائندگان) لاہور سمیت پنجاب کے مختلف شہروں میں بجلی کے بحران میں شدت آ گئی ہے۔ جس پر لوگوں کی طرف سے احتجاج جاری ہے۔ لاہور میں ہر گھنٹے بعد 4 سے 6 گھنٹے کی مسلسل لوڈشیڈنگ کی جانے لگی مرمت کے نام پر گذشتہ روز 33 فیڈرز 6 سے 8 گھنٹے تک بند کر دئیے گئے جس پر شہر کے مختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ پانی کی بھی شدید قلت رہی۔ پنجاب کے مختلف شہروں میں 24 گھنٹوں میں سے 18، 20 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ ہوتی رہی۔ این ٹی ڈی سی کے مطابق تیل کے بعد گیس بھی نایاب ہو گئی، ہائیڈل پیداوار بھی نہیں ہو رہی۔ ٹوبہ ٹیک سنگھ سے نامہ نگار کے مطابق شہر اور گرد و نواح میں غیر اعلانیہ طویل لوڈشیڈنگ کا سلسلہ بدستور جاری ہے اور ہر آدھ گھنٹہ کے بعد پانچ 5 گھنٹے لگاتار بجلی بند رہنا معمول بن گیا ہے، پاکپتن سے نامہ نگار کے مطابق پاکپتن اور گردونواح میں واپڈا کی غیر اعلانیہ بدترین لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 20 گھنٹوں سے بھی تجاوز کر گیا ہے اوکاڑہ سے نامہ نگار کے مطابق اوکاڑہ میں بجلی کی مسلسل 6، 6 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ سے لوگ سراپا احتجاج بن گئے۔ بجلی کی بندش نے کاروبار زندگی مفلوج کر کے رکھ دیا۔ این این آئی کے مطابق پاکستان میں شدت پسندوں کی جانب سے گرڈ سٹیشنوں کو نشانہ بنانے کے واقعات میں اضافے کے بعد حکومت نے ملک کے تمام گرڈ سٹیشنوں کے اطراف فرنٹیئر کانسٹیبلری کو تعینات کرنے کا فیصلہ کیا ہے، وزارت پانی و بجلی اور وزارت داخلہ نے اس بات پر اتفاق کیا کہ ایف سی کے 450 اہلکار فوری طور پر صوبہ پنجاب، خیبر پی کے، بلوچستان کے پندرہ گرڈ سٹیشنوں پر تعینات کئے جائیں۔ ایک رپورٹ میں سینئر اہلکار کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ گرڈ سٹیشنوں پر ایف سی فورسز کی تعیناتی کا فیصلہ شیخ محمدی گرڈ سٹیشن پر حملے کے بعد پانی و بجلی کے نگران وزیر ڈاکٹر مصدق ملک اور نگران وزیر داخلہ ملک حبیب اللہ خان کے درمیان ہونے والے ایک اجلاس میں کیا گیا۔ علاوہ ازیں پنجاب کے سبھی علاقوں میں 20 گھنٹے تک بجلی بند ہو رہی ہے۔ بجلی کا خسارہ 7320 میگاواٹ تک جا پہنچا ہے۔ دوسری جانب سوئی گیس نے پاور یونٹوں کو گیس کی اضافی سپلائی شروع نہیں کی۔ لاہور کی گنجان آبادیوں میں بار بار لوڈشیڈنگ کے باعث پانی کی بھی قلت ہو گئی۔ شیخوپورہ سے نامہ نگار خصوصی کے مطابق ہاﺅسنگ کالونی اور اس کی نواحی آبادیوں میں بجلی کی لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 20 گھنٹے سے بھی تجاوز کر گیا۔ قیام پور فیڈر کے صارفین نے برج والا روڈ پر شدید احتجاج کیا۔
بجلی کا بحران بدترین