لوڈشیڈنگ جاری‘ کئی شہروں میں مظاہرے‘ گرمی سے 5 افراد جاں بحق

لاہور (نامہ نگاران+ ایجنسیاں) مختلف شہروں میں غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے‘ بجلی نہ ہونے کے باعث شدید گرمی سے لاہور‘ گوجرانوالہ‘ منڈی بہائو الدین اور نارنگ منڈی میں 5 افراد جاں بحق ہوگئے۔ کئی شہروں میں 18 گھنٹوں کی لوڈشیڈنگ کے خلاف مظاہرے کیے گئے۔ مریدکے میں جی ٹی روڈ کو بلاک کردیا گیا جس کے باعث ایک گھنٹے تک ٹریفک معطل رہی۔ پاکپتن میں عدالتوں کا بائیکاٹ کرکے واپڈا کے خلاف احتجاج کیا گیا۔ لاہور سمیت گوجرانوالہ‘ کھڈیاں خاص‘ سانگلہ ہل‘ نارنگ منڈی‘ شرقپور شریف‘ اٹھارہ ہزاری‘ کنگن پور‘ ننکانہ صاحب‘ پاکپتن‘ ٹوبہ ٹیک سنگھ‘ مریدکے‘ منڈی بہائو الدین‘ ملتان اور کئی شہروں میں شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا‘ ملتان میں 5 گھنٹے تک بہاولپور جانے والی شاہراہ کو بلاک کردیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق مریدکے سے نامہ نگار کے مطابق 16 گھنٹے تک کی لوڈشیڈنگ اور سخت گرمی کے ستائے ہوئے ہزاروں تاجروں اور شہریوں نے بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خلاف زبردست احتجاج کرتے ہوئے جی ٹی روڈ بلا ک کر دی۔ مظاہرین نے آگ لگا کر ہر قسم کی ٹریفک کو روک دیا جس سے جی ٹی روڈ کی دونوں اطراف گاڑیوں کی لمبی لائنیں لگ گئیں۔ دوپہر 12 بجے تک شروع کیا جانے والا احتجاج کا سلسلہ ایک گھنٹہ تک جاری رہا اور اس دوران پولیس اور مظاہرین کے درمیان آنکھ مچولی جاری رہی، انجمن تاجراں ظفر آرکیڈ اور اس سے ملحقہ کاروباری مراکز کے تاجروں نے احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ ہر ایک گھنٹہ بعد ایک سے ڈیڑھ گھنٹہ کی لوڈشیڈنگ نے نہ صرف ان کا ہر قسم کا کاروبار تباہ کر دیا ہے بلکہ سخت گرمی میں ان کا جینا بھی مشکل ہو گیا۔ گوجرانوالہ سے نمائندہ خصوصی کے مطابق گرمی کی شدت سے نڈھال خاتون منیرہ بی بی دم توڑ گئی۔ بخشی خانہ میں شدید گرمی و حبس کے باعث 3 قیدی بیہوش ہوگئے جس کے خلاف قیدیوں نے احتجاج اور انتظامیہ کے خلاف شدید نعرہ بازی کی۔ شہریوں نے بھی لوڈشیڈنگ کے خلاف جلوس نکالا اور 2 گھنٹے تک حافظ آباد روڈ بلاک کیے رکھی۔ ننکانہ صاحب سے نامہ نگار کے مطابق ننکانہ صاحب ا ور اس کے گردونواح میں بدترین لوڈشیڈنگ کا سلسلہ بدستور جاری ہے اور کاروبار زندگی مفلوج ہوکر رہ گیا ہے۔ کھڈیاں خاص سے نامہ نگار کے مطابق کھڈیاں خاص میں دن رات کے 24 گھنٹوں میں 18 گھنٹے بجلی کی بندش کا سلسلہ جاری ہے۔ نارنگ منڈی سے نامہ نگار کے مطابق قیامت خیز گرمی اور بجلی کی لوڈشیڈنگ کی تاب نہ لاتے ہوئے 2 خواتین دم توڑ گئیں۔ گرمی سے اکتائے ہوئے لوگوں کا واپڈا کے خلاف مظاہرہ نعرے بازی کی گئی۔ شرقپور شریف سے نامہ نگار کے مطابق لوڈشیڈنگ کے دوران بازاروں ‘ مارکیٹوں اور شاپنگ سنٹروں میں چلنے والے جنریٹروں کے زہرآلود مضر صحت دھوئیں نے لوگوں کو بیماریوں میں مبتلا کرنا شروع کردیا بلکہ جنریٹر چلنے سے گرمی کی شدت میں مزید اضافہ ہورہا ہے۔ کنگن پور سے نامہ نگار کے مطابق کنگن پور کے شہریوں نے اندھی لوڈشیڈنگ کے خلاف زبردست احتجاج کیا۔ جی این آئی کے مطابق ملتان میں طویل غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کے خلاف شہریوں کی جانب سے مظاہرہ کیا گیا اور ملتان سے بہاولپور جانے والی مرکزی شاہراہ کو بلاک کردیا جس کے باعث 5 گھنٹے تک ٹریفک معطل رہی۔ ذرائع کے مطابق ملتان و گردونواح کے علاقوں میں18 سے 19 گھنٹے لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے۔ننکانہ کے نواحی گائوں علاول کوٹ کے رہائشی زمیندار محسن مان نے لوڈشیڈنگ کی وجہ سے پانی کی مطلوبہ ضرورت پوری نہ ہونے پر اپنی 5 ایکڑ فصل دھان پر احتجاجاً ہل چلا کر ضائع کردی۔ معلوم ہوا ہے کہ اسی گائوں کے دیگر کئی کسانوں نے تقریباً 35 ایکڑ فصل دھان پانی کی کمی کی وجہ سے تلف کرچکے ہیں۔ سانگلہ ہل سے نمائندہ نوائے وقت کے مطابق سانگلہ ہل میں بجلی کی بدترین لوڈشیڈنگ‘ شہری بلبلا اٹھے۔ دریں اثناء لاہور میں مصطفی آباد کے علاقہ میں دربار حضرت میاں میر پر 58 سالہ ملنگ نے گرمی کی شدت سے دم توڑ گیا جبکہ ہال روڈ کے الخدمت گروپ کے زیراہتمام تاجروں کے گروپ نے لوڈشیڈنگ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ احتجاجی مظاہرہ کی قیادت بابر محمود نے کی۔ تاجروں نے لوڈشیڈنگ کے خلاف نعرہ بازی کی۔ ٹائر جلاکر مال روڈ بلاک کردی۔ مظاہرے کے دوران تاجروں کے گروپ کی دوسرے تاجروں کے گروپ سے تلخ کلامی ہوئی اور وہ آپس میں دست و گریباں ہوگئے۔نیشنل گرڈ میں خرابی وجہ سے پنجاب اور سندھ کے کئی علاقوں میں بجلی بند ہوگئی‘ لاہور کے کئی علاقے بھی متاثر ہوئے۔