لگتا ہے ریلوے کا انجام بھی رینٹل پاور پراجیکٹس جیسا ہو گا: ہائیکورٹ

لاہور (وقائع نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس خالد محمود نے ریلوے حکام کی طرف سے پاکستان ریلوے کے450 انجن مرمت کروانے کی بجائے بھارت سے کرائے پر 50 انجن حاصل کرنے کے خلاف دائر درخواست پر قرار دیا ہے کہ بادی النظر میں محسوس ہوتا ہے کہ ریلوے کا انجام بھی وہی ہوگا جو رینٹل پاور پروجیکٹس کا ہوا تھا، کرپٹ افسران ریلوے کو لوٹ کر کھا گئے ہیں ۔اسی لئے آج عوام مشکلات کا شکار ہیں، فاضل عدالت نے یہ ریمارکس انصر محمود جسپال کی درخواست پر سیکرٹری ریلوے سے 2ہفتوں میںجواب طلب کرتے ہوئے دئیے۔ درخواست گزار انصر محمود جسپال کی طرف سے دائر کی جانے والی درخواست میں موقف اختیار کیا گہا کہ پاکستان ریلوے نے بھارت سے50انجن کرائے پر حاصل کرنے کا فیصلہ کیا، حالانکہ پاکستان ریلوے کے پاس 450انجن پڑے ہوئے ہیں جن کو مرمت کیا جاسکتا ہے، ریلوے حکام جان بوجھ کر اپنے انجنوں کو ٹھیک کرنا نہیں چاہتے۔
لاہور ہائیکورٹ