حلقہ بندیوں کا بل منظور نہ ہوا تو انتخابات پرانی مردم شماری پر ہونگے: بیرسٹر ظفراللہ

اسلام آباد (خبرنگار+ نمائندہ نوائے وقت+ نیشن رپورٹ) وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے قانون و انصاف بیرسٹر ظفراللہ نے کہا ہے حلقہ بندیوں کا ترمیمی بل 2017 سینٹ سے منظور نہ ہوا تو آئندہ انتخابات پرانی مردم شماری پر ہی منعقد ہونگے۔ انہوں نے امید ظاہر کی سینٹ یہ بل منظور کرلے گی۔ خبر نگار+ نمائندہ نوائے وقت کے مطابق انہوں نے کہا پارلیمنٹ کو سپریم کورٹ کے اختیارات کم کرنے کا اختیار حاصل نہیں، ججوں کے مواخذے کے لئے قائم واحد فورم سپریم جوڈیشل کونسل نے 70 سال میں صرف 2 مقدمات میں فیصلہ سنایا، انتخابات وقت پر کرانے کے حوالے سے سینٹ میں آئینی ترمیم آئندہ اجلاس میں منظور ہو جائے گی، لاءکمیٹی نے وفاقی دارالحکومت کیلئے 5 نئے قوانین متعارف (تجویز) کئے گئے ہیں، جن میں جائیداد کی منتقلی، استغاثہ کے مسائل، دارالحکومت میں فروخت ہونے والی کھانے کی اشیاءکے معیار چیک کرنے کے لئے اسلام آباد فوڈ اتھارٹی اور فوجداری قانون میں ترامیم شامل ہیں۔ سپریم کورٹ کے رپورٹرز کو بریفنگ دیتے ہوئے انہوں نے کہا ان نئے قوانین کی عبوری منظوری وزیراعظم نے دیدی ہے تاہم حتمی منظوری بعد میں دی جائے گی۔ انہوں نے کہا انتخابات وقت پر کرانے کے حوالے سے سینٹ میں آئینی ترمیم آئندہ اجلاس میںمنظور ہوجائے گی۔ انہوں نے اس ترمیم کے حوالے سے پیپلزپارٹی، پی ٹی آئی سمیت تمام جماعتوں کا اتفاق تھا۔ ان جماعتوں نے جو جو ترامیم تجویز کی گئی تھیں وہ مان لی گئی تھیں۔ اسی وجہ سے انہوں نے قومی اسمبلی میں اس قانون کے حق میں ووٹ دیا۔ امکان ہے آئندہ اجلاس میں یہ بل منظور ہوجائے گا۔
بیرسٹر ظفراللہ