وفاقی، پنجاب حکومتیں گرانے کیلئے اپوزیشن نے ایک اور دھرنے کی منصوبہ بندی کرلی

اسلام آباد (محمد نواز رضا/ وقائع نگار خصوصی) باخبر ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ مسلم لیگ ن کی وفاقی اور صوبائی (پنجاب) حکومت کو گرانے کے لئے اپوزیشن جماعتوں نے اسلام آباد یا لاہور میں ایک بڑا دھرنا دینے کی منصوبہ بندی شروع کر دی ہے۔ اپوزیشن کی باہم مخالف جماعتیں نواز شریف دشمنی میں اکٹھی ہو رہی ہیں۔ پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرین کے صدر آصف علی زرداری کی عوامی تحریک کے چیئرمین ڈاکٹر طاہر القادری سے ملاقات اس سلسلے کی کڑی ہے۔ آصف علی زرداری جو ہمیشہ دھرنا دینے کے مخالف رہے ہیں نے بھی ڈاکٹر طاہر القادری کے دھرنا میں شرکت کا عندیہ دیا ہے جبکہ تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان ڈاکٹر طاہر القادری کے دھرنا میں بھرپور شرکت کا اعلان کر چکے ہیں۔ ذرائع کے مطابق نواز شریف دشمن سیاسی جماعتیں حکومت پر اپنا دبا¶ بڑھانے کے لئے سرگرم عمل ہو گئی ہیں اگرچہ عمران خان‘ آصف علی زرداری کو اپنی تنقید کا نشانہ بناتے رہتے ہیں لیکن پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت نے عمران خان کو اس لب و لہجہ میں جواب دینے سے گریز کیا جس میں عمران خان آصف علی زرداری اور نواز شریف کو تنقید کا نشانہ بناتے ہیں۔ ذرائع کے مطابق وفاقی حکومت اور حکومت پنجاب نئی صورتحال کا جائزہ لے رہی ہے اس سلسلے میں ایک حکمت عملی تیار کی جا رہی ہے جس کے تحت دھرنا دینے والوں کواسلام آباد اور لاہور میں داخل ہونے سے روکنے کے لئے پوری ریاستی قوت استعمال کی جائے گی۔
منصوبہ بندی