سری لنکا، چیف جسٹس پر الزامات کے بغیر مواخذے کی کارروائی شروع


کولمبو (بی بی سی) سری لنکا کی پارلیمان کے اراکین نے ملک کی چیف جسٹس شیرانی بندرانائیکے کے خلاف مواخذہ کی کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔ حکومت اور عدلیہ کے درمیان جاری محاذ آرائی کے بعد حکومت نے چیف جسٹس پر الزام عائد کیا ہے کہ انہوں نے عہدے کے تحت دیئے گئے اختیارات سے تجاوز کیا۔ حکومتی ترجمان کیہلیار امبوکویلا نے کہا کہ مواخذے کیلئے دستاویزات پارلیمان کے سپیکر کے حوالے کردی گئیں۔ حکومتی ترجمان نے کسی قسم کے معین الزامات کا ذکر نہیں کیا مگر کہا کہ اس کارروائی کو 75 ممبران پارلیمان کی تائید حاصل ہے۔ گزشتہ کچھ عرصہ سے سری لنکن حکومت اور چیف جسٹس کے درمیان معاملات کافی کشیدہ ہیں جنہوں نے حکومت کے خلاف کافی فیصلے کئے ہیں۔ شیرانی بندرانائیکے سری لنکا کی پہلی خاتون چیف جسٹس ہیں جنہیں پچھلے سال اس عہدے پر تعینات کیا گیا تھا۔