یہ سہولت کار ، عیدِ قرباں اور ۔ ۔ !

کالم نگار  |  اصغر علی شاد
یہ سہولت کار ، عیدِ قرباں اور ۔ ۔ !

سبھی جانتے ہیں کہ عیدِ قرباں ایثار و قربانی کا دوسرا نام ہے اور اس متبرک اور محترم موقع پر دنیا بھر کے مسلمان بالعموم اور پاکستانی عوام بالخصوص اس ضمن میں بے مثال کارکردگی کا مظاہرہ کرنے میں کسی بخل سے کام نہیں لیتے اور اپنے تن من دھن سے پوری کوشش کی جاتی ہے کہ اس تہوار کے جذبے کے پسِ پردہ اصل محرکات کو اس کی حقیقی روح کے مطابق ادا کریں ۔
تبھی تواس ضمن میں جتنی مالیت کی کھالیں عطیات کی جاتی ہیں ، اس کا تصور بھی عام نارمل حالات میں کوئی نہیں کر سکتا ۔ اس معاملے کا یہ پہلو بھی پیشِ نظر رہنا چاہیے کہ بیتے کئی برسوں سے دہشتگردی جیسے مکروہ فعل میں ملوث افراد اور گروہ بھی اس معاملے میں ایسا نا قابلِ رشک کردار ادا کرتے ہیں جس سے ہر ذی شعور کسی حد تک آگاہ ہے ۔ اور ایسے سہولت کار اس حوالے سے اپنے مذموم عزائم کی تکمیل کی خاطر ہر وہ حربہ استعمال کرتے ہیں جس سے جانے انجانے میں ان منفی عناصر کی امداد ہو سکے۔
یہاں یہ امر بھی قابلِ ذکر ہے کہ یہ قبیح عمل محض پاکستان تک محدود نہیں بلکہ دنیا کے دیگر معاشروں میں بھی یہ دھندہ بڑی حد تک پھل پھول رہا ہے جس کی تازہ مثال چند روز قبل تب سامنے آئی جب بھارت میں بابا ’ ’ گرو میت رام ‘‘ نے ’’ ڈیرہ سچا سودا ‘‘ نامی تنظیم بنا کر لاکھوں بلکہ کروڑوں عام لوگوں کو بیوقوف بنایا اور کروڑوں ہی نہیں بلکہ اربوں کی جائیداد بنائی اور یہ سلسلہ قریباً ہر جگہ پر جاری ہے ۔
یہ بھی واضح رہے کہ بھارتی صوبے ہریانہ کا وزیر اعلیٰ اور RSS کا سر گرم لیڈر ’’ منوہر لعل کھٹر ‘‘ بھی اس معاملے میں پیش پیش ہے اور اس نے مودی اور راجناتھ سنگھ کی ہدایات پر ’’ گرومیت رام ‘‘ کی پھر پور معاونت کی اور اس ضمن میں ہر طرح سے سہولت کاری کی ۔اس کے علاوہ اس ضمن میں بھارت میں ماضی قریب کے آسا رام باپو ،نرمل بابا ، سنت رام پال ، ایشا دھاری سنت ، سوامی بھیمانند مہاراج اور سوامی نیتا نند جیسے ڈھونگیوں کے نام بطور دلیل پیش کیے جا سکتے ہیں ۔
اسی تناظر میں غیر جانبدار انسان دوست حلقوں نے رائے ظاہر کی ہے کہ تمام دنیا کی مانند وطنِ عزیز میں بھی اس قسم کے کچھ گروہ خاصے سر گرم ہیں جو ایسے تعصبات کو فروغ دے کر براہ راست ’’ را ‘‘ ، ’’ این ڈی ایس ‘‘ اور اس نوع کی دوسری دہشتگرد تنظیموں کی ہر ممکن معاونت کرتے ہیں ۔
ایسے میں توقع کی جانی چاہیے کہ عید الضحیٰ جیسے مقدس تہوار کے موقع پر سبھی حلقے صدقہ خیرات کرتے ہوئے اس بات کا خصوصی دھیان رکھیں گے کہ اس کا فائدے معاشرے کے نا پسندیدہ طبقات نہ اٹھا سکیں ۔ اس ضمن میں معاشرے کے تمام طبقات پر خصوصی ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ میڈیا کے ذریعے آگاہی کی ایسی مہم چلائیں جس سے ان منفی سوچ کے حامل عناصر کی حوصلہ شکنی ہو سکے اور اچھی سوچ کے حامل اور مستحق طبقات کی امداد ہو سکے ۔ یوں پاکستانی سماج بتدریج ارتقاء کی منازل زیادہ موثر ڈھنگ سے طے کر پائے گا ( ان شاء اللہ )