عدالتوں سے جلد کاغذی کلچر کا خاتمہ ہو جائیگا: چیف جسٹس ہائیکورٹ

لاہور (وقائع نگار خصوصی) چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ مسٹر جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا ہے کہ عدلیہ کا بنیادی فرض لوگوں کی خدمت کرنا اور سائلین کو انصاف مہیا کرنا ہے۔ہائی کورٹ میں سائلین، وکلاءاور عدالتی ملازمین کی سہولت کےلئے ایم سی بی بنک برانچ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وکلاءاور دیگر سرکاری و نیم سرکاری اداروں کے تعاون سے ایسے اقدامات بروئے کار لائے جارہے ہیں جس سے سائلین کو آسان اور سستا انصاف فراہم کیا جاسکے۔ عدلیہ کا بیرونی دنیا سے براہ راست رابطہ نہیں ہوتا تاہم دنیا میں جو ترقی ہو رہی ہے اس پر آنکھیں بند نہیں ہو سکتیں، اس لئے آئین کے تحت حاصل اختیارات کی بناءپر مو¿ثر کردار ادا کرنا ہوگا۔ عدالت عالیہ کے آئی ٹی کے شعبہ پر خصوصی توجہ دی ہے اور اس ترقی یافتہ ممالک کی طرز پر کاغذی کارروائی کی بجائے کمپیوٹر کے استعمال کو فروغ دیا تاکہ عوام کے لئے حصول انصاف میں آسانیاں پیدا کی جائیں۔ بنک کے صدر عمران مقبول نے عدالت عالیہ میں بنک برانچ کا قیام باعث فخر قرار دیا۔ آئی این پی کے مطابق چیف جسٹس ہائیکورٹ نے کہا کہ جلد عدالتوں سے کاغذی کلچر کا خاتمہ ہو جائیگا۔
جسٹس عمر عطا بندیال