قتل عام بند نہ کرایا گیا تو پاکستان نقشے سے مٹ جائیگا: الطاف


کراچی (خصوصی رپورٹر) متحدہ کے قائد الطاف حسین نے کہا ہے کہ فرقہ ورانہ ہم آہنگی وقت کی اہم ضرورت ہے قتل شیعہ‘ سنی‘ بریلوی‘ اہلحدیث یا کسی کا بھی ہو انسانیت کا قتل ہے فرقہ ورانہ فسادات کی سازشیں تیزی سے کی جارہی ہیں حکومت اور قانون نافذ کرنے والے ادارے قتل عام بند کرائیں ورنہ تو یہ قتل عام ایسا رخ اختیار کرے گا کہ پاکستان کا نشان نقشے سے مٹ جائے گا۔ وہ گذشتہ روز جناح گراﺅنڈ میں تمام مسالک کے علمائ‘ زعماءکرام اور مشائخ کے اجتماع سے خطاب کررہے تھے۔ کوئی یہ نہ کہہ سکے الطاف حسین ڈر گیا۔ جو لوگ پیسے لیکر میرے گھر پر آئے تھے انہوں نے خود ٹی وی پر آکر کہا تھا کہ الطاف حسین نے پیسے لینے سے انکار کردیا تھا لیکن ٹی وی ٹاک شوز میں میرا نام لیا جارہا ہے‘ الطاف حسین نے کبھی ایجنسیوں کے آگے بک کر پیسے نہیں لئے‘ شیعہ سنی مل کر اپنے علاقوں میں پہرہ دیں پھر ان علاقوں میں کوئی کچھ نہیں کرسکے گا۔ قانون نافذ کرنے والی ایجنسیاں قتل عام بند کرائیں ورنہ تو یہ قتل عام ایسا رخ اختیار کرے گا کہ پاکستان کا نشان نقشے سے مٹ جائے گا۔ ایم کیو ایم کی جانب سے ملتوی کردہ ریفرنڈم ضرور ہوگا آج آپ تمام مسالک کے لوگ مل کر رابطہ کمیٹی کو مجبور کریں کہ مجھے پاکستان آنے کی اجازت دے دی جائے جس پر شرکاءتقریب نے کہا کہ حالات ایسے نہیں کہ آپ پاکستان واپس آئیں۔