سائنسدانوں کی 10 ارب سال قبل سیاہ توانائی کی ماہیت جاننے کا تجربہ


لندن (بی بی سی اردو) سائنس دانوں نے ایک نادر تکنیک استعمال کر کے دس ارب سال قبل سیاہ توانائی (dark energy) کی ماہیت جاننے کی کوشش کی ہے۔ انہیں توقع ہے کہ اس سے یہ سمجھنے میں مدد ملے گی کہ یہ توانائی کس طرح کائنات کے تیزی سے پھیلنے کا باعث بن رہی ہے۔ اس تکنیک میں کویزار (quasar) نامی دور افتادہ روشن خلائی اجسام کی مدد سے خلا میں ہائیڈروجن گیس کے بادلوں کے پھیلاو¿ کا نقشہ بنانے کی کوشش کی گئی ہے۔ ان بادلوں کی تقسیم کے تھری ڈی نقشے کو وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ سیاہ توانائی کے اثر کا جائزہ لینے کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اس تحقیق پر مبنی ایک مقالہ جریدے ایسٹرانومی اینڈ ایسٹرفزکس میں شائع ہوا ہے، جسے بین الاقوامی ماہرینِ فلکیات کی ایک ٹیم نے تحریر کیا ہے۔ اس تکنیک میں ان لہروں کا مطالعہ کیا جاتا ہے جو بگ بینگ کے بعد کی کائنات میں بکھر گئیں، اور بعد ازاں ٹھنڈی ہو کرمادے کی شکل میں منجمد ہو گئیں۔