چھٹی کے باوجود لوڈشیڈنگ جاری، لاہور میں 44 فیڈر بند، شہری سراپا احتجاج

لاہور (نیوز رپورٹر) بجلی کی غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ چھٹی والے روز بھی جاری رہا۔ اتوار والے روز لاہور الیکٹرک سپلائی کمپنی کے44 کے قریب فیڈرز بند رہے۔لاہور  اور اس کے مضافات میں گھنٹوں بجلی بند ہونے سے صارفین کے روزمرہ معمولات میں شدید خلل پڑا۔ اس صورت حال پر شہریوں نے شدید احتجاج کیا کہ حکومت لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے لئے فوراً اقدامات کرے اور بڑے آبی ذخائر کالا باغ ڈیم کی تعمیر کا اعلان جلد کیا جائے۔ بجلی کا خسارہ مجموعی طور پر 2200 میگاواٹ رہا۔ بجلی کی جنریشن 89 سو میگاواٹ اور ڈیمانڈ 11ہزار ایک سو میگاواٹ رہی۔ این این آئی کے مطابق مختلف شہری اور دیہی علاقوں میں لوڈشیڈنگ کا دورانیہ 10سے 14گھنٹے تک برقرار رہا۔ 350 میگا واٹ کے حامل پاکجن پاور پلانٹ کی بوائلر ٹیوب میں لیکج کو تاحال دور نہیں کیا جا سکا۔ این ٹی ڈی سی کے ترجمان کے مطابق گزشتہ روز بجلی کا شارٹ فال 2200میگا واٹ رہا۔  لاہور سمیت ملک بھر میں اتوار کی تعطیل کے باوجود لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ اپنا عروج پر رہا جبکہ کئی مقامات پر مینٹیننس کے نام پر بھی کئی گھنٹے تک مسلسل بجلی بند رکھی گئی۔ لاہور سمیت کئی علاقوں میں گیس کے کم پریشر کی شکایات بھی بر قرار ہیں اور گھروں میں خواتین کو کھانا تیار کرنے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔