حکومتی ٹیم بااختیار ہے، طالبان سے مذاکرات کامیاب ہونگے: رانا تنویر

مریدکے (نامہ نگار) وفاقی وزیر دفاعی پیداوار رانا تنویر حسین نے کہا ہے کہ انشاء اللہ حکومت طالبان مذاکرات کامیاب ہونگے۔ حکومتی ٹیم بااختیار ہے، وزیر داخلہ حکومتی کمیٹی کے نگران ہیں، وزیراعظم کو لمحہ بہ لمحہ آگاہ رکھا جا رہا ہے۔ ڈرون حملے حکومت کے جرأت مندانہ موقف کے سبب بند ہوئے ہیں۔ حکومت اپوزیشن مذہبی قوتیں سبھی مذاکرات کی حمایتی ہیں۔ ملکی آئین شرعی ہے، طالبان کے رابطہ کار انہیں آئین کے متعلق آگاہ کریں۔ 2015ء میں پاکستان دہشت گردی، بجلی و گیس بحرانوں سے پاک مضبوط وطن بن کر ابھرے گا۔ بجلی و گیس چوروں کے خلاف آپریشن می شدت پیدا کر رہے ہیں، عوام بھی حکومت سے تعاون کریں، مسئلہ کشمیر کا واحد حل اقوام متحدہ کی قراردادیں ہیں، بھارت ہٹ دھرمی چھوڑ دے۔ اس امر کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز رانا فارم ہائوس مریدکے میں کھلی کچہری کے بعد نوائے وقت اور میڈیا نمائندگان سے خصوصی گفتگو کے دوران کیا۔ اس موقع پر رانا افضال حسین، صاحبزادہ حاجی محمد امجد اجمل اور دیگر بھی موجود تھے۔ رانا تنویر نے کہا کہ طالبان قیادت نے مذاکرات کا فیصلہ کر کے اغیار کی سازشوں کو بے نقاب کیا ہے۔ حکومت قوم اور فوج مذاکرات کی کامیابی کیلئے متحد، متفق اور دعاگو ہے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر ہماری شہ رگ ہے جس کے بغیر پاکستان نامکمل ہے۔ ہم اس کا حل بھی مذاکرات کے ذریعے چاہتے ہیں لیکن بھارت ہٹ دھرمی مسئلہ کشمیر کے حل میں رکاوٹ ہے۔ ہم کشمیر سے ایک انچ بھی پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی قیادت میں صرف پاکستان ہی نہیں بلکہ عالم اسلام ایک مضبوط قوت بن کر ابھرے گا۔ ثناء نیوز کے مطابق رانا تنویر حسین نے کہا کہ موجودہ حکومت کی شروع دن سے ہی کوشش رہی ہے کہ تمام مسائل کا حل بات چیت سے ہو، طالبان کے ساتھ مذاکرات بھی ہماری اسی پالیسی کا حصہ ہے رانا تنویر حسین کا کہنا تھا کہ موجودہ حالات میں تمام سیاسی پارٹیوں کو قومی مفاد مد نظر رکھنا چاہئے۔ ہماری خواہش تھی کہ تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان بھی مذاکراتی کمیٹی کا حصہ بنتے مگر افسوس انہوں نے سیاسی ناپختگی کا ثبوت دیا۔