مشرف کیخلاف کارروائی، مہنگائی، دہشت گردی سے توجہ ہٹانے کا منصوبہ لگتا ہے: لاہور فورم

لاہور )خبرنگار ( لاہور کے دانشوروں اور صحافیوں پر مشتمل ملک کے ممتاز تھنک ٹینک ”لاہو ر فورم “ نے کہا ہے سابق آرمی چیف جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے خلاف آرٹیکل 6کے تحت کارروائی کا آغاز بڑھتی ہوئی مہنگائی اور قابو میں نہ آتی ہوئی دہشت گردی سے توجہ ہٹانے کا سوچا سمجھا حکومتی منصوبہ دکھائی دیتا ہے۔ پاکستان کے سابق وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری کی میزبانی میں ہونے والے لاہور فورم کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے بیشتر مقررین کا کہنا تھا انصاف کا تقاضا یہ ہے آرٹیکل چھ کے تحت کارروائی کا آغاز 12 اکتوبر 1999ءکے واقعات سے کیا جائے۔ ان کے مطابق 12 اکتوبر کے واقعات کو 17ویں ترمیم میں جو قانونی تحفظ فراہم کیا گیا تھا، اسے 18ویں ترمیم میں ختم کردیا گیا ہے۔ فورم کی رائے میں یہ بات پیش نظر رکھی جانی چاہیے کہ منتخب انصاف دراصل انصاف نہیں ہوتا۔ لاہور فورم نے کراچی میں قیام امن کے لیے جاری ٹارگٹڈ آپریشن کو سراہا اور اس آپریشن کو جاری رکھنے اور پولیس کو سیاسی اثرات سے پاک کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ اجلاس میں ملک میں بڑھتی ہوئی فرقہ وارانہ کشیدگی پر تشویش کا اظہار کیا گیا، تاہم حالیہ محرم کے دوران پاکستانی میڈیا کے ذمہ دارانہ کردار کو سراہا گیا البتہ انتظامی سطح پر حکومتی اقدامات پر غفلت کے معاملہ پر تنقید کی گئی۔ اجلاس میں مقررین نے کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے ساتھ مذاکرات کے عمل کو آگے بڑھانے پر زور دیا اور کہا امن کے حوالے سے ہر ممکن کوششیں کی جانی چاہئیں۔ کیونکہ پاکستان میں امن عالمی دنیا کے ساتھ ہماری اپنی داخلی سلامتی، خود مختاری اور معاشی ترقی کے لیے اہم ہے۔ ریاست کو اپنی رٹ کو مضبوط بنانے اور ملک میں امن وامان کی صورتحال کو بہتر بنانے پر خصوصی اقدامات کرنے چاہئیں۔ فورم کے اجلاس سے سابق رکن قومی اسمبلی بیگم مہناز رفیع، صدر سی پی این ای مجیب الرحمن شامی، معروف تجزیہ کار ڈاکٹر حسن عسکری، دفاعی تجزیہ نگار بریگیڈئر ریٹائرڈ فاروق حمید خان، ایڈیٹر نیشن سلیم بخاری، ڈپٹی ایڈیٹر و کالم نگار نوائے وقت سعید آسی، ارشار احمد عارف، سلمان عابد، ڈاکٹر اجمل نیازی، فرخ سہیل گوئندی، قیوم نظامی اور توفیق بٹ کے علاوہ سینئر صحافی تنویر شہزاد، مظہر قیوم اور حافظ طارق محمود نے بھی خطاب کیا۔
لاہور فورم