ایڈز کا عالمی دن منایا گیا، پاکستان خطرناک عالمی زون میں شامل

لاہور+ نیویارک (نیوز رپورٹر+ وقت نیوز+ آن لائن) ایڈز سے آگاہی کا دن پاکستان سمیت دنیا بھر میں منایا گیا۔ پاکستان میں 87ہزار افراد ایڈز کا شکار ہیں جبکہ عالمی ادارہ صحت نے پاکستان کو ایڈز کے خطرناک زون میں شامل کر لیا ہے۔ نمائندہ یونیسیف ناصر سرفراز نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں سالانہ تین ہزار اموات ایچ آئی وی ایڈز کے باعث ہو رہی ہیں۔ علاوہ ازیں ایڈز کے عالمی دن کے موقع پر جاریکر دہ رپورٹ میں عالمی ادارہ صحت نے کہا کہ ایڈز کا جان لیوا مرض انسان کا مدافعتی نطام تباہ کر دیتا ہے۔ جنسی بے راہ روی‘ استعمال شدہ سرنجز اور متاثرہ مریض کے خون سے ایڈز لاحق ہو سکتی ہے۔ پاکستان میں ایڈز کے مریضوں کی تعداد ایک لاکھ سے تجاوز کر چکی ہے جبکہ ملک بھر میں علاج کے صرف 15 مراکز قائم ہیں۔ ادھر لاہور میں ایڈز کے عالمی دن کے حوالے سےمختلف تقریبات اور شعوری مہم کے لئے واک کا بھی انعقاد کیا گیا۔ طبی ماہرین نے کہا کہ ایڈز کے پھیلنے کا سب سے بڑا سبب سرنج ہے جس سے اجتناب کرنا چاہئے مگر افسوس ہم عطائی ڈاکٹروں سے طاقت کےلئے گلوکوز اور خون لگوانا پسند کرتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار ایڈز کنٹرول پروگرام پنجاب کے زیراہتمام منعقدہ پروگرام سے خطاب کر تے ہوئے کیا۔ ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ سروسز پنجاب ڈاکٹر زاہد پرویز نے کہا کہ2010ءکے بعد سے ایڈز کنٹرول پروگرام کو حکومت خود چلا رہی ہے۔ ایڈ ز کنٹرول پروگرام پنجاب کے ڈائریکٹر ڈاکٹر سلمان شاہد نے بتایا کہ اس وقت پنجاب میں 5000ایڈز سے متاثرہ مریض ہیں۔ ایک اور تقریب میں مقررین نے کہا کہ لاہور میں انجکشن کے ذریعے منشیات کا استعمال کرنے والے افراد کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔ لکشمی چوک، داتا دربار ، علی پارک ، چوبرجی پارک، شارع فاطمہ جناح ، رائل پارک ، بند روڈ ، لاری اڈہ اور لاہور کے مختلف علاقے ان سرگرمیوں کا مرکز ہیں ۔
ایڈز /عالمی دن